وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس

وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس

وفاقی وزراء، مشیر قومی سلامتی، چیرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی، تینوں مسلح افواج کے سربراہان, ڈی جی ائی ایس ائی، آئی بی و ایف ائی اے اور سینئر سول و عسکری حکام شریک۔

کمیٹی کو ملکی داخلی صورتحال اور ٹی ایل پی کے احتجاج کے حوالے سے بریفنگ دی گئی۔ کسی بھی گروپ یا عناصر کو امن و عامہ کی صورتحال بگاڑنے اور حکومت پر دباو ڈالنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ وزیر اعظم ٹی ایل پی احتجاج کے دوران جان و مال کو نقصان پہنچانے پر گہری تشویش کا اظہار۔

قانون کی عملداری میں خلل ڈالنے کی مزید کوئی رعایت نہیں دی جائے گی۔ قومی سلامتی کمیٹی کمیٹی نے پولیس کی پیشہ وارانہ کارکردگی اور تحمل کو خراج تحسین پیش کیا جن کے 4 اہلکار شہید اور 400 سے زیادہ زخمی ہوئے۔

کمیٹی نے اعادہ کیا کے تحمل کا مطلب ہر گز کمزوری نا سمجھا جائے۔ پولیس کو جان و مال کے تحفظ کے لیے دفاع کا حق حاصل ہے۔

ریاست پر امن احتجاج کے حق کو تسلیم کرتی ہے تاہم ٹی ایل پی نے دانستہ طور پر سرکاری و نجی املاک کو نقصان پہنچایا اور اہلکاروں پر تشدد کیا۔ یہ رویہ قابل قبول نہیں۔ قومی سلامتی کمیٹی

ریاست آئین و قانون کے دائرہ کار میں رہ کر مزاکرات کرے گی اور کسی قسم کے غیر آئینی اور بلا جواز مطالبات تسلیم نہیں کرے گی۔

وزیر اعظم اور قومی سلامتی کمیٹی ممبران نے امن و عامہ کی صورتحال برقرار رکھنے کے دوران شہید ہونے والے پولیس اہلکاروں کے لیے تعزیت کی اور کہا کے شہید اہلکاروں کے اہل خانہ کو معاوضہ اور ان کی کفالت یقینی بنائی جائے گی۔

حکومت عوام کے محافظ، قانون نافظ کرنے والے اہلکاروں کی ہر قسم امداد اور پشت پناہی جاری رکھے گی۔وزیر اعظم کسی بھی پچھلی حکومت یا وزیر اعظم نے ناموس رسالت ﷺ کے تحفظ اور اسلاموفوبیا کے تدارک کے لیے ملکی و بین الاقوامی سطح پر اتنا کام نہیں کیا جتنا اس حکومت نے کیا۔ کمیٹی

حکومت نے کامیابی سے ان ایشوز کو اقوام متحدہ، او ائی سی، یوروپین یونین اور دیگر بین الاقوامی فورمز پر اجاگر کیا رحمت اللعالمین اتھارٹی کے قیام کا بنیادی مقصد بھی اسلام کے خلاف منفی پراپیگنڈے کو رد کرنا ہے۔ کمیٹی

کمیٹی نے ٹی ایل پی کی طرف سے ناموس رسالت کے غلط اور گمراہ کن استعمال کی شدید مذمت کی جس کی وجہ سے فرقہ واریت کو ہوا ملتی ہے اور ملک دشمن عناصر فائدہ اٹھاتے ہیں۔

اربوں مسلمان حضرت محمد ﷺ کی ذات اقدس سے محبت کرتے ہیں اور عقیدت رکھتے ہیں تاہم کسی بھی دوسری اسلامی ریاست میں املاک اور عوام کو نقصان نہیں پہنچایا گیا۔ ٹی ایل پی کی وجہ سے دنیا بھر میں پاکستان کا منفی تاثر گیا ہے۔ کمیٹی

ٹی ایل پی نے ماضی میں بھی متعدد بار پر تشدد احتجاج کا راستہ اختیار کیا جس سے ملکی معیشت کو شدید نقصان پہنچا اور ریاست کی حکمرانی کو چیلینج کیا گیا۔ کمیٹی

قومی سلامتی کمیٹی نے متفقہ طور پر اس عزم کو دہرایا کے ریاست کی خودمختاری کو کسی بھی اندرونی یا بیرونی خطرات سے محفوظ رکھا جائے گا۔

کمیٹی نے فیصلہ کیا کے ٹی ایل پی کے ساتھ صرف آئین و قانون کے دائرہ کار میں رہتے ہوئے مذاکرت کئے جائیں گے۔ ٹی ایل پی کو مزید قانون شکنی پر کوئی رعایت نہیں دی جائے گی اور نا ہی کسی قسم کے ناجائز مطالبات تسلیم کیے جائیں گے۔

ریاست کی حکمرانی کو چیلینج کرنے کی کسی صورت اجازت نہیں دی جائے گی۔ وزیر اعظم نے ہدایت کی کے عوام کے جان و مال کے تحفظ اور ریاست کی حکمرانی کو قائم رکھنے کے لیے تمام اقدامات یقینی بنائیں جائیں۔

35th National Security Committee Meeting

Islamabad: The 35th meeting of the National Security Committee (NSC) was convened under the chairmanship of Prime Minister Imran Khan on Friday, 29th October 2021 at Prime Minister House. The meeting was attended by relevant Federal Cabinet members, National Security Adviser, Chairman Joint Chiefs of Staff Committee, all three Services Chiefs, DGs of ISI, IB, and FIA, and senior civil and military officers.

The NSC received a detailed briefing on the country’s internal security situation and the ongoing agitation by the Tehreek-e-Labaik Pakistan (TLP).

The Prime Minister stressed that no group or entity will be allowed to cause public disruption or use violence to pressure the government. Taking serious note of the unprovoked violent attacks committed by TLP members, the Committee resolved not to tolerate any further breach of law by this proscribed group.

The Committee praised the police for their professionalism and restraint despite being directly targeted and suffering casualties, including four martyrs and over four hundred injured, but warned that the state’s restraint should not be seen as a sign of weakness.

While emphasizing that the government recognized the right of peaceful protest of all Pakistanis, Committee members were unanimous that TLP was deliberately employing violence against public property, state officials, and ordinary citizens to create instability in the country and that this shall not be tolerated. All organs of the state stood ready to act as per the law to protect the life and property of citizens.

The Prime Minister and Committee members expressed condolences at the loss of life of policemen and committed to compensating and looking after their families. Commending the exceptional performance of the law enforcement agencies, the Prime Minister assured that the government will firmly stand behind them as they act to enforce the law and protect the public.

The Committee took notice that no previous government or Prime Minister had taken such an unequivocal, public international stance on the issue of Namoos-e-Risalat and Islamophobia. Under the current government, Pakistan has successfully brought these issues to the fore of international diplomatic discourse in the United Nations, Organization of Islamic Cooperation, and European Union, among other fora. One key objective of establishing the Rehmatul-lil-Alameen Authority is also to intellectually counter international propaganda against Islam and the sanctity of the Prophet (PBUH).

Participants decried TLP’s misuse of religion and the issue of Namoos-e-Risalat for political gains, which was misleading the common man and creating internal discord within society. TLP’s violence had ended up furthering the agenda of sectarian elements and external enemies of the state. It was pointed out that despite the overwhelming majority of the over 1.5 billion Muslims globally holding utmost love and respect for our Prophet (PBUH), no such violent agitation had taken place in any other Muslim country.

Participants recalled that TLP had adopted the ploy of violent street agitation on numerous occasions since 2017 and made unrealistic demands each time, solely as a tool to gain political strength. In the process, TLP’s actions have caused public disorder, serious economic losses to the country, besides boosting the morale of other terrorist outfits seeking to challenge the state’s writ.

The Committee unanimously resolved to guard its sovereignty from all internal and external threats and to not allow TLP to challenge the writ of the state in any way. Participants endorsed the government’s decision to negotiate with the group only within the bounds of the law, without offering leniency for any crimes committed by TLP operatives. Endorsing the view of the Committee, the Prime Minister instructed that all measures and actions necessary to enforce the law and protect the interests of the state and public shall be ensured.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *